2008 اپریل 29

ہم دیکھیں گے | We shall see | Hum Dekhein gay

Artist: Iqbal Bano
Writer: Faiz Ahmad Faiz
آرٹسٹ: اقبال بانو
شاعر: فیض احمد فیض
Hum Dekhein gay
Hum Dekhein gay

Lazim hein k Hum Dekhein gay
Who din ke jiska wada hay
Jo loh e azal mein likha hay
Hum dekhein gay
Lazim hein k Hum Dekhein gay
Who din ke jiska wada hay


Jub zulm o sitam k koh e garan
roi ki tarah urr jain gay
Jub zulm o sitam k koh e garan
roi ki tarah urr jain gay

Hum mehkoomon ke paaon tale
ye dharti dhahr dharh dharke gi
Aur ahle hakam ke sir oper
Jub bijli kar kar karke gi

Lazim hein k Hum Dekhein gay

Jub zulm o sitam ke koh e garan
roi ki tarah ur jain gay
Roi ki tarah ur jain gay
Hum mehkoomon ke paaon tale
ye dharti dhahr dharh dharke gi
Aur ahle hakam ke sir oper
Jub bijli kar kar karke gi


Hum Dekhein gay
Hum Dekhein gay
Hum Dekhein gay

Jub arz e khuda ke kaabay se
sub butt uthwai jain gay
Hum ahle safa, mardood e haram
Masnad pe bithai jain gay
sub taj uchale jain gay
Sub takht giray jain gay
Hum dekhien gay
Bus naam rahe ga Allah ka
Jo ghaib bhi hay hazir bhi
Jo nasir bhi hay mansir bhi
Uthay gay unal Haq ka nara
JO mein bhi hon aur tum bhi ho
aur raj kare gi khalq e khuda
JO mein bhi hon aur tum bhi ho

Hum dekhien gay
Bus naam rahe ga Allah ka
Jo ghaib bhi hay hazir bhi
Jo nasir bhi hay mansir bhi
Uthay gay unal Haq ka nara
Jo mein bhi hon aur tum bhi ho
aur raj kare gi khalq e khuda
Jo mein bhi hon aur tum bhi ho

ہم دیکھیں گے
ہم دیکھیں گے

لاظم ہے کہ ہم دیکھیں گے
وہ دن کہ جس کا وعدہ ہے
جو لوہ ازل میں لکھا ہے
ہم دیکھیں گے
لاظم ہے کہ ہم دیکھیں گے
وہ دن کہ جس کا وعدہ ہے


جب ظلم و ستم کے کوہ گرم
روئی کی طرح اڑ جائیں گے
جب ظلم و ستم کے کوہ گرم
روئی کی طرح اڑ جائیں گے

ہم محکوموں کے پائوں تلے
یہ دھرتی دھڑ دھڑ دھڑکے گی
اور اہل حکم کے سر اوپر
جب بجلی کڑ کڑ کڑکے گی

لاظم ہے کہ ہم دیکھیں گے
جب ظلم و ستم کے کوہ گرم
روئی کی طرح اڑ جائیں گے
روئی کی طرح اڑ جائیں گے
ہم محکوموں کے پائوں تلے
یہ دھرتی دھڑ دھڑ دھڑکے گی
اور اہل حکم کے سر اوپر
جب ظلم و ستم کے کوہ گرم


ہم دیکھیں گے
ہم دیکھیں گے
ہم دیکھیں گے


جب ارض خدا کے کعبے سے
سب بت اٹھوائے جائیں گے
ہم اہل صفی'، مردود حرم
مصند پےبٹھائیں جائیں گے
سب تاج اچھالے جائیں گے
سب تخت گر‏آئے جائیں گے

ہم دیکھیں گے
بس نام رہے گا الللھ کا
جو غائب بھی ہے حاظر بھی
جو ناصر بھی ہےمنصور بھی
اٹھیں گے انل حق کے نعرے
جو میں بھی ہوں اور تم بھی ہو
اور راج کرے گی خلق خدا
جو میں بھی ہوں اور تم بھی ہو

ہم دیکھیں گے
بس نام رہے گا الللھ کا
جو غائب بھی ہے حاظر بھی
جو ناصر بھی ہےمنصور بھی
اٹھیں گے انل حق کے نعرے
جو میں بھی ہوں اور تم بھی ہو
اور راج کرے گی خلق خدا
جو میں بھی ہوں اور تم بھی ہو

We shall see

It is a must that we shall see
The day that has been prophesized
The one written on the Tablet of Fate

We shall see

When the insurmountable mountains of oppression
Shall blow as if cotton flakes
And beneath the feet of us common folk
This land will throb with a deafening sound
And upon the heads of the despotic folk
Lightening will strike a thundering pound.

We shall see

When from the Palace of our Lord
All earthly gods will be taken out
We, righteous ones, outcasts of Church,
shall don a glorious robe, no doubt.
All crowns will fly
All thrones will fall

We shall see

Only the name of the Lord will stay on
who is unseen, yet ever seeing
who is the sight, as well as the scene
The shout of "I am The Truth"* shall rise
which is true for you and I
and the creation of the Lord will rule
which is true for you and I.

We shall see

It is a must that we shall see

We shall see

---------
Lyrics Contributed By: Abdullah Khan(Urdu:Roman) Omer(English) Faraz Ahmad(URDU)
----------

کوئی تبصرے نہیں: