2008 اپریل 29

منجا نب ڈاکٹر کاشف

Mujh ko apny hazoor rehny do
مجھ کو اپنے حضور رہنے دو
Kuch mera bhi gharoor rehny do
کچھ میرا بھی غرور رہنے دو
Muskurahat na rokna apni
مسکراہٹ نا روکنا اپنی
Meri aankhon main noor rehny do
میری آنکھوں میں نور رہنے دو
Raaston ka khumaar kafi hai
راستوں کو خمار کافی ہے
Manzilon ka saroor rehny do
منزلوں کا صرور کافی ہے
Har khatta ki sazaa nahi lazim
ہر خطا کی سزا نہیں لازم
Kuch to mera qasoor rehny do
کچھ تو میرا قصور رہنے دو
Tootany main ajeeb lazzat hai
ٹوٹنے میں بھی عجیب لزت ہے
Tum mujh ko chakna choor rehny do
تم مجھے چکنا چور رہنے دو

کوئی تبصرے نہیں: