2008 فروری 29

خوشی

"خوشی کچھ نہیں، غم کا نا ہونا یے"

2008 فروری 23

کوئی دُھندلہ سا ایک چہرہ میری آنکھوں میں رہتا ہے
کوئی بھٹکتا سا ایک جُگنو میرے خوابوں میں رہتا ہے
ایک مانُوس سی آواز مجھے سونے نہیں دیتی ۔۔۔
کوئی اُلجھا سا ایک جُملہ میری یادوں میں رہتا ہے
مجھے خود پر نہیں قابو ، نہ میں کچھ کہہ سکتا ہوں
اثر یہ کس کے لفظوں کا میری باتوں میں رہتا ہے
دسمبر کی خُنک راتیں مجھے بہت بے چین رکھتی ہیں
لمس ایک ہاتھ کا اب تک میری سوچوں میں رہتا ہے
ہے دل بھی مضطرب ، احساس بھی ، سوچوں کی اُلجھن بھی
یہ کس کی آنکھ کا آنسو میری آنکھوں میں رہتا ہے
--------------------------------------
ایک دوست کی آواز میری سکریپ بک میں

2008 فروری 5

اسلام علیکم

اسلام علیکم، فراز کے بلاگ پر۔ ابھی میں اردو کی ٹا ئپنگ کی مشق کر رہا ہوں۔